Advertisements
Pakistan

CRSS Quarterly Security Report – Q3 2019 (English & Urdu)

Readers can approach CRSS for information related to this report. Alternately, you may send your queries to mail@crss.pk, directly to Mohammad Nafees, Senior Research Fellow, CRSS – the author of the report (mohammad.nafees@yahoo.com), or Zeeshan Salahuddin, Senior Research Fellow, the editor.

Casualties from Violence in Pakistan

In the words of United Nations Secretary-General Antonio Guterres, the world is facing “an unprecedented threat from intolerance, violent extremism and terrorism” that affects every country[1]. In Pakistan, intolerance is difficult to measure empirically, but violence and terrorism seem to be on the decline. Data from the third quarter data on violence-related fatalities shows a drop (14%) from 229 in Q2 to 197 in Q3. Injuries sustained from violence also dropped from 275 to 243 (table 01).

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گٹیرس نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ دنیا کو “عدم رواداری ، پرتشدد انتہا پسندی اور دہشت گردی سے شدید خطرہ لاحق ہے ، جس کا اثر ہر ملک پر پڑرہا ہے۔ـٕ  اگرچہ پاکستان میں عدم رواداری کو تجرباتی طور پر جانچنا مشکل ہے ، لیکن ایسا لگتا ہے کہ پاکستان میں متشدد انتہا پسندی اور دہشت گردی میں مسلسل کمی واقع ہورہی ہے ۔ اس سال  تیسری سہ ماہی (جولائی تا ستمبر)   کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ تشدد سے ہونے والی اموات 229  سے کم ہوکر 197 ہوگئ ہیں جو کہ پچھلے سہ ماہی کے مقابلے میں 14 فیصد کم ہیں۔ زخمیوں کی تعداد بھی 275 سے گھٹ کر 243 ہوگئی (ٹیبل 01)۔

Table 01: Casualties from violence by region – Q3, 2019
Region Fatalities Injuries Total
Balochistan 57 128 185
Khyber Pukhtunkhwa (KP) 36 56 92
Sindh 42 7 49
Punjab 24 5 29
Federally Administered Tribal Areas (FATA) 33 41 74
Islamabad Capital Territory (ICT) 4 1 5
Azad Jammu and Kashmir (AJK) 1 8 9
Total 197 246 443

Like Q2, Balochistan recorded the highest number, but the greatest percentage reduction in fatalities. Former-FATA, ICT, and Punjab province also reflected a downward trend, while KP and Sindh provinces showed a moderate rise in the number of fatalities in Q3 (table 02).

پچھلی سہ ماہی کی طرح اس سہ ماہی میں بھی بلوچستان ہی سب سے زیادہ دھشتگردی کا شکار رہا، لیکن ملک بھر میں مجموعی اموات میں کافی کمی واقع ہوئی۔ سابقہ فاٹا ، اسلام آباد، اور صوبہ پنجاب میں بھی دھشتگردی میں کمی کا رجحان رہا۔ اس کے برعکس خیبرپختونخواہ اور سندھ کے صوبوں میں ہلاکتوں کی تعداد میں نہائت مختصراضافہ دیکھا گیا۔ نیچے دئے گئے ٹیبل میں شامل اعداد و شمار ملاحظہ کیجئے۔

Table 02: Fatalities from violence by region – Q2 vs. Q3 2019
Region Q2 Q3 % Change
Balochistan 83 57 -38.7%
Islamabad Capital Territory (ICT) 6 4 -33.3%
Federally Administered Tribal Areas (FATA) 45 33 -26.7%
Punjab 31 24 -22.6%
Khyber Pukhtunkhwa (KP) 32 36 12.5%
Sindh 32 42 31.3%
Azad Jammu and Kashmir (AJK) 0 1 n/a
Total 229 197 -17.6%

When comparing individual months in Q2 and Q3, July showed an improvement over April, but September was significantly worse than June. Overall, as has been the case for the last four years now, overall violence-related fatalities continue to drop, despite fluctuations (table 03).

اگرپچھلی سہ ماہی سے اس سہ ماہی کے مقابلے میں انفرادی مہینوں کا موازنہ کیا گیا تو ، جولائی بہ مقابلہ اپریل اور اگست بہ مقابلہ مئی دھشتگردی کے واقعات میں کم متاثر ہوئے، لیکن ستمبرکا مہینہ جون سے نمایاں طور پر بدتررہا۔ تاہم مجموعی طور پرچند اتار چڑھاؤ کے باوجود تشدد سے متعلق اموات میں پچھلے کئ سالوں سے کمی آتی جارہی ہے اور اس کا تسلسل اب بھی دیکھا جاسکتا ہے۔ (ٹیبل 03) ملاحظہ کریں۔

Table 03: Comparative data on fatalities by month – Q2 vs. Q3 2019
Month Q2 Q3 % Change
July 2019 vs April 2019 84 56 -33.3%
August 2019 vs May 2019 89 61 -31.5%
September 2019 vs June 2019 56 80 42.9%
Total 229 197 -14.0%

Karachi suffered the highest number of fatalities during this quarter, a 44% increase over the previous quarter, while Quetta exhibited a small decrease. Dera Ismail Khan and Dir witnessed an alarming rise in violence-related fatalities. North Waziristan, Lahore, and Peshawar reported a significant drop (table 04).

اس سہ ماہی کے دوران کراچی شہر کو سب سے زیادہ اموات کا سامنا کرنا پڑا ، جوکہ پچھلی سہ ماہی کے مقابلے میں 44 فیصد زیادہ تھا، جبکہ کوئٹہ میں ان واقعات میں پچھلی سہ ماہی کے مقابلے کمی واقع ہوئی ۔ ڈیرہ اسماعیل خان اور دیردو ایسےا ضلاع ہیں جہاں تشدد سے متعلق اموات میں نمایاں اضافہ دیکھا گیا۔ شمالی وزیرستان ، لاہور اور پشاور میں جبکہ واضح کمی (ٹیبل 04) ریکارڈ کی گئی۔

Table 04: Fatalities by district – Q2 2019 vs Q3 2019
Districts/Agency/Region Q2 Q3
Karachi 27 39
Quetta 29 23
North Waziristan 40 20
Dera Ismail Khan 2 17
Dir 0 10
Bajaur 3 7
Rawalpindi 3 7
Lahore 22 7
Khuzdar 0 5
Islamabad 6 4
Kech 1 4
Kuchlak 0 4
Mohmand 2 4
Naseerabad 3 4
Bannu 0 3
Gujrat 3 3
Killa Abdullah 6 3
Panjgur 4 3
Peshawar 13 3
Sialkot 0 3
Faisalabad 1 2
Khyber 0 2
Mastung 9 2
Badin 0 1
Bolan 0 1
Chaghi 0 1
Charsadda 1 1
Duki 0 1
Harnai 7 1
Lakki Marwat 2 1
Neelum Valley 0 1
Okara 0 1
Pishin 0 1
Rahim Yar Khan 0 1
Shikarpur 2 1
Sibi 0 1
Sukkur 0 1
Swat 2 1
Buner 2 0
Ghotki 1 0
Gwadar 16 0
Hyderabad 2 0
Karak 1 0
Loralai 3 3
Mardan 3 0
Multan 2 0
Nowshera 5 0
Tank 1 0
Ziarat 5 0
Total 229 197

The number of suicide attacks went up from three to five in Q3, but resultant fatalities were nearly a third of Q2. Fatalities from clashes with the security forces, IED explosions, and bomb explosions also decreased in Q3. Target killings went up by roughly 30%, both in incidents and fatalities. An upsurge in dead bodies found and armed attacks was also recorded in Q3 (table 05).

تیسری سہ ماہی میں خود کش حملوں کی تعداد تین سے پانچ ہوگئی ، لیکن اس طرح کے حملوں کے نتیجے میں ہونے والی ہلاکتیں دوسری سہ ماہی کا تقریبا ایک تہائی تھیں۔ سیکیورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپوں  اور بم دھماکوں سے ہونے والی اموات میں بھی تیسری سہ ماہی میں کمی واقع ہوئی۔ جبکہ ٹارگٹ کلنگ کے واقعات اور اموات دونوں میں تقریبا 30 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ تیسری سہ ماہی میں لاشوں کے ملنے کے واقعات اور مسلح حملوں میں بھی اضافہ دیکھا گیا (ٹیبل 05 ملاحظہ کریں)

Fatalities of security officials declined, but the overall percentage remained the same. Almost all militant attacks (armed and suicide bombings) in Q3 were directed against security personnel. Yet, civilian deaths were nearly half of all violence-related fatalities. Militant/insurgent/criminal fatalities showed a decline in both number and percentage of overall fatalities (table 06).

تیسری سہ ماہی میں ، سیکیورٹی اہلکاروں کی ہلاکتوں میں کمی واقع ہوئی ، لیکن انکی مجموعی فیصد اسی طرح رہا۔ تیسری سہ ماہی میں تقریبا تمام مسلح اور خودکش بم دھماکے سیکیورٹی اہلکاروں کے خلاف کیے گئے تھے۔ اس کے باوجود ، دھشتگردی سے ہونے والی اموات میں شہریوں کی تعداد کل تعداد کا نصف تھیں۔ عسکریت پسند / باغی / اور چوروں کی مجموعی اموات کی تعداد اور فیصد دونوں میں کمی واقع ہوئی ہے (جدول 06 دیکھیں)۔

Table 06: Fatalities by type of victims – Q2 vs Q3 2019
Militants/Criminals/Insurgents Q2 Q3
Militants 33 21
Criminals 25 23
Total Militant/Criminal/Insurgent 58 44
Percentage of total fatalities 25.3% 22.3%
 
Government and Security Officials
Security officials 66 56
Government Officials 0 1
Total Government/Security Official 66 57
Percentage of total fatalities 28.8% 28.9%
 
Civilian
Civilian 83 84
Politician 14 6
Media personnel 2 1
Religious party 0 3
Religious person 5 1
Foreigner 1 1
Total Civilians 105 96
Percentage of total fatalities 45.9% 48.7%
Overall Total 229 197

TTP claimed most terror attacks during Q3. A suicide attack in Quetta on July 24, 2019 was reported by a regional newspaper to have been claimed by IS, but mainstream newspapers did not validate this. The insurgent groups in Balochistan also claimed responsibility for two attacks, as reported by another regional newspaper. A new criminal gang by the name of “125 gang” was reported to be involved in various crimes in Karachi. All other militant and insurgent groups that were found to be active in the last quarter remained dormant in Q3 (table 07).

ٹی ٹی پی (طالبان) نے تیسری سہ ماہی کے دوران سب سے زیادہ دہشت گرد حملوں کا دعوی کیا۔ جبکہ ایک علاقائی اخبار کے مطابق کے مطابق 24 جولائی ، 2019 کو کوئٹہ میں ہونے والے ایک خود کش حملے کا دعوی دائش نے کیا تھا ، اگرچہ دوسرے قومی اخبارات نے اس کی توثیق نہیں کی۔ ایک اور علاقائی اخبار کے مطابق ، بلوچستان میں باغی گروپوں نے بھی دو حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ کراچی میں مختلف جرائم میں “125 گینگ” کے نام سے ایک نیا مجرم گروہ ملوث ہونے کی اطلاع ہے۔  جبکہ پچھلی سہ ماہی میں سرگرم پائے جانے والے دوسرے تمام عسکریت پسند اور باغی گروپ اس سہ ماہی میں غیر فعال رہے۔ (ٹیبل 7ملاحظہ کریں)

 Table 07: Fatalities claimed by militant outfits – Q2 2018 to Q3 2019
Claimants Q2, 2019 Q3, 2019
TTP/Lashkar-e-Jhangvi/IS 20 0
Balochistan Liberation Front (BLF)/
Balochistan Republican Army (BRA)/BRG
14 0
TTP – Harakat-ul-Ansar (HuA)/Jundullah (JA) 13 0
Balochistan Liberation Army (BLA) and splinter groups 9 4
Tehrik-e-Taliban Pakistan (TTP) 6 22
Afghan Taliban/Afghan-based TTP 3 0
Baloch Republican Guards (BRG) 3 2
Daish/Islamic State (IS) 0 2
Gangsters/dacoits outfits (125 gang) 0 1
Total 68 31

Sectarian Violence

A sharp decline in sectarian violence was observed in Q3. Balochistan remained the most affected with 6 fatalities and 35 injuries. Sindh had two fatalities, while Punjab and former-FATA reported one fatality each. No sectarian violence was recorded from any other regions in the country (table 08).

تیسری سہ ماہی میں فرقہ وارانہ تشدد میں  بے حد کمی دیکھی گئی۔ بلوچستان میں 6 اموات اور  35افراد کے زخمی ہونے کی وجہ سے یہ صوبہ سب سے زیادہ متاثر رہا۔ جبکہ سندھ میں دو اموات ہوئیں ، پنجاب اور سابقہ فاٹا میں ایک ایک اموات کی اطلاع ملی۔ ملک میں کسی بھی دوسرے خطے میں فرقہ وارانہ تشدد ریکارڈ نہیں کیا گیا (ٹیبل 08)

Table 08: Fatalities from sectarian violence – Q3 2019
Province Fatalities Injuries Total
Balochistan 6 35 41
Sindh 2 0 2
Punjab 1 0 1
Federally Administered Tribal Areas (FATA) 1 0 1
Total 10 35 45

Sectarian violence declined from 40 fatalities in Q3 to 10 in Q3, a 75% drop. Comparative data for Q2 and Q3 shows that the Sunni majority, for the first time in many years, are the most affected victims of sectarian violence (table 09). Learning from history, this will likely not be a permanent shift.

تیسری سہ ماہی میں فرقہ وارانہ تشدد سے ہونے والی حلاکتیں 40  سے کم ہوکر 10 رہ گئیں جوکہ تقریبا  75 فیصد کمی تھی۔ دوسری سہ ماہی اور تیسری سہ ماہی کے تقابلی اعدادوشمار سے پتہ چلتا ہے کہ سنی مسلمانوں کی اموات زیادہ رہیں اورایسا کئی سالوں میں پہلی بارہوا ہے۔ تاریخی طور پر اگر دیکھا جائے تو یہ کوئی مستقل تبدیلی نہیں ہوگی۔ ( ٹیبل 9ملاحظہ کریں)

Table 09: Fatalities by religion from sectarian violence – Q2 2019 vs Q3 2019
Religion/Sect Q2 2019 Q3 2019
Sunnis 5 6
Shia Hazaras 12 2
Christians 0 1
Shias 0 1
Sufis 13 0
Unknown/Others* 10 0
Total 23 0
*Note: Others in Q2 include victims of the Hazarganj market.

[1] Associated Press. (2019, September 26). World faces ‘unprecedented threat’ from terrorism, warns UN chief. Dawn. Retrieved October 2, 2019, from https://www.dawn.com/news/1507486/world-faces-unprecedented-threat-from-terrorism-warns-un-chief.

Advertisements

Leave a Reply

%d bloggers like this: